حکایات رومی

ایک چڑیا کی تین نصیحتیں
حکایتِ رومی

ایک شخص نے چڑیا پکڑنے کےلئے جال بچھایا.. اتفاق سےایک چڑیا اس میں پھنس گئی اور شکاری نے اسے پکڑ لیا..
چڑیا نے اس سے کہا.. ” اے انسان ! تم نے کئی ہرن ‘ بکرے اور مرغ وغیرہ کھاۓ ھیں ان چیزوں کے مقابلے میں میری کیا حقیقت ھے.. ذرا سا گوشت میرے جسم میں ہے اس سے تمہارا کیا بنے گا..؟ تمہارا تو پیٹ بھی نہیں بھرے گا.. لیکن اگر تم مجھے آزاد کردو تو میں تمہیں تین نصیحتیں کرونگی جن پر عمل کرنا تمہارے لئے بہت مفید ھوگا..

ان میں سے ایک نصیحت تو میں ابھی کروں گی.. جبکہ دوسری اس وقت جب تم مجھے چھوڑ دو گے اور میں دیوار پر جا بیٹھوں گی.. اس کے بعد تیسری اور آخری نصیحت اس وقت کروں گی جب دیوار سے اڑکرسامنے درخت کی شاخ پر جا بیٹھونگی.. ”
اس شخص کے دل میں تجسس پیدا ھوا کہ نہ جانے چڑیا کیا فائدہ مند نصیحتیں کرے .. اس نے چڑیا کی بات مانتے ہوئے اس سے پوچھا.. ” تم مجھے پہلی نصیحت کرو ‘ پھر میں تمہیں چھوڑ دونگا.. ”
چنانچہ چڑیا نے کہا.. ” میری پہلی نصیحت یہ ہے کہ” جو بات کبھی نہیں ہو سکتی اسکا یقین مت کرنا.. ”
یہ سن کر اس آدمی نے چڑیا کو چھوڑ دیا اور وہ سامنے دیوار پر جا بیٹھی.. پھر بولی.. ” میری دوسری نصیحت یہ ھے کہ "جو بات ھو جاۓ اسکا غم نہ کرنا..”
اور پھر کہنے لگی.. ” اے بھلے مانس! تم نے مجھے چھوڑ کر بہت بڑی غلطی کی.. کیونکہ میرے پیٹ میں پاؤ بھر کا انتہائی نایاب پتھر ھے.. اگر تم مجھے ذبح کرتے اور میرے پیٹ سے اس موتی کو نکال لیتے تو اس کے فروخت کرنے سے تمہیں اس قدردولت حاصل ھوتی کہ تمہاری آنے والی کئی نسلوں کے لئے کافی ھوتی.. اور تم بہت بڑے رئیس ھو جاتے.. ”
اس شخص نے جو یہ بات سنی تو لگا افسوس کرنے.. اور پچھتایا.. کہ اس چڑیا کو چھوڑ کراپنی زندگی کی بہت بڑی غلطی کی.. اگر اسے نہ چھوڑتا تو میری نسلیں سنور جاتیں..
چڑیا نے اسے اس طرح سوچ میں پڑے دیکھا تو اڑ کر درخت کی شاخ پرجا بیٹھی اور پولی.. ” اے بھلے مانس! ابھی میں نے تمہیں پہلی نصیحت کی جسے تم بھول گئے کہ "جو بات نہ ہوسکنے والی ھو اسکا ھر گز یقین نہ کرنا..” لیکن تم نے میری اس بات کا اعتبار کرلیا کہ میں چھٹاک بھر وزن رکھنے والی چڑیا اپنے پیٹ میں پاؤ وزن کا موتی رکھتی ھوں.. کیا یہ ممکن ہے..؟
میں نے تمہیں دوسری نصیحت یہ کی تھی کہ ” جو بات ھو جاۓ اسکا غم نہ کرنا”۔ مگر تم نے دوسری نصیحت کا بھی کوئی اثر نہ لیا اور غم و افسوس میں مبتلا ہو گئے کہ خواہ مخواہ مجھے جانے دیا..
تمہیں کوئی بھی نصیحت کرنا بالکل بیکار ھے.. تم نے میری پہلی دو نصیحتوں پر کب عمل کیا جو تیسری پر کرو گے.. تم نصیحت کے قابل نہیں.. ”
یہ کہتے ہوۓ چڑیا پھر سے اڑی.. اورہوا میں پرواز کر گئی.. وہ شخص وہیں کھڑا چڑیا کی باتوں پر غور و فکر کرتے ھوۓ سوچوں میں کھو گیا..!!
وہ لوگ خوش نصیب ھوتے ھیں جنہیں کوئی نصیحت کرنے والا ہو.. ھم اکثر خود کو عقلِ کل سمجھتے ھوۓ اپنے مخلص ساتھیوں اور بزرگوں کی نصیحتوں پر کان نہیں دھرتے.. اور اس میں نقصان ہمارا ہی ہوتا ہے..
یہ نصیحتیں صرف کہنے کی باتیں نہیں ہوتیں کہ کسی نے کہہ لیا ‘ ھم نے سن لیا..بلکہ دانائی اور دوسروں کے تجربات سے حاصل ھونے والے انمول اثاثے ہیں.. جو یقیننا” ہمارے لئے مشعلِ راہ ثابت ھو سکتے ھیں اگر ہم ان نصیحتوں پر عمل بھی کریں..!!
مرسلہ : عبیرہ خان

متعلقہ موضوعات

  • میرے خوب صورت پر ہی میری جان کے دشمن ہیں۱۶/۰۷/۲۰۱۵ میرے خوب صورت پر ہی میری جان کے دشمن ہیں میرے خوب صورت پر ہی میرے جان کے دشمن ہیں حکایت رومی " ایک مور جنگل میں کھڑا اپنے پر نوچ کر پھینک رہا تھا ایک عقلمند یہ دیکھ کر بہت حیران ہوا بولا ' اے مور ! تیرا دل کس طرح گوارا […]
  • اللہ کے منتخب بندے۲۵/۰۶/۲۰۱۵ اللہ کے منتخب بندے اللہ کے منتخب بندے ایک دفعہ حضرت عمرؓ بازار سے گزر رہے تھے، وہ ایک شخص کے پاس گزرے جو دعا کر رہا تھا، "اے اللہ مجھے اپنے چند لوگوں میں شامل کر، اے اللہ مجھے اپنے چند لوگوں میں شامل […]
  • ریاست تملناڈو میں اردو زبان اسکولی نصاب میں دوبارہ شامل :- اکبر زاہد۲۸/۱۱/۲۰۱۷ ریاست تملناڈو میں اردو زبان اسکولی نصاب میں دوبارہ شامل :- اکبر زاہد رپورٹ: اکبر زاہد - چینائی حکومتِ تملناڈو نے اردو زبان کو اسکولی نصاب میں دوبارہ شامل کرلیا ڈاکٹر نیلوفر کفیل وزیر برائے محنت و روزگار اور اردو دان طبقہ کی کوششیں ثمر آور ثابت […]
  • شخصیت سازی ۔ سیاہی ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ماریہ ماہ وش۱۶/۰۳/۲۰۱۷ شخصیت سازی ۔ سیاہی ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ماریہ ماہ وش شخصیت سازی سیاہی ماریہ ماہ وش ابھی اپنے چھ سالہ بیٹے کو ایک قصہ سنا رہی تھی، قصہ سناتے سناتے کئ باتیں ذہن میں آئیں لیکن ان باتوں کا تعلق بیٹے کو سمجھانے سے […]
  • کہانی : انوکھا فیصلہ۱۲/۰۷/۲۰۱۵ کہانی : انوکھا فیصلہ کہانی : انوکھا فیصلہ مرسلہ : عبیرہ خان ایک شہنشاہ جب دنیا کو فتح کرنے کے ارادے سے نکلا تو اس کا گزرافریقہ کی ایک ایسی بستی سے ہوا جو دنیا کے ہنگاموں سے دور اور بڑی پرسکون تھی۔ یہاں […]
  • شیطان کی نیکی۰۲/۰۷/۲۰۱۵ شیطان کی نیکی شیطان کی نیکی کہتے ہیں کہ ایک شخص صبح سویرے اُٹھا، صاف کپڑے پہنے اور مسجد کی طرف ہولیا تاکہ فجرکی نمازباجماعت ادا کرنے کی سعادت حاصل کرے۔ راستے میں ٹھوکرلگی اور گر پڑا، کپڑے کیچڑ سے […]
  • مولانا آزاد کے افکار اور تعلیمی خدمات : – فضل حسین۰۷/۱۲/۲۰۱۷ مولانا آزاد کے افکار اور تعلیمی خدمات : – فضل حسین مولانا آزاد کے افکار اور تعلیمی خدمات فضل حسین ریسرچ اسکالر ۔مولانا آزاد نیشنل اردو یونیورسٹی حیدرآباد فون نمبر: 9010950747 ای میل: کوئی قابل ہو تو ہم شان […]
  • مدارس میں تعلیم ۔ کچھ حقائق‘چند گذارشات – – مولاناامانت علی قاسمیؔ۱۲/۰۸/۲۰۱۵ مدارس میں تعلیم ۔ کچھ حقائق‘چند گذارشات – – مولاناامانت علی قاسمیؔ مدارس میں تعلیم ۔ کچھ حقائق‘چند گذارشات مولاناامانت علی قاسمیؔ استاذ دار العلوم حیدرآباد Email: Mob: 07207326738 مدارس عربیہ اسلامیہ سرمایہ ملت کے […]