منفی سوچ ‘ ذہنی دباؤکا سبب ۔ ۔ ۔

negative-emotions

منفی سوچ ‘ ذہنی دباؤکا سبب

منفی سوچ ‘ ذہنی امراض کا سرچشمہ ہے ۔ ایسا ہرگز نہیں ہے کہ صرف محرومیاں ہی انسان میں منفی سوچ پیدا کرتی ہیں بلکہ اچھے خاصے تعلیم یافتہ افراد بھی اس کا شکار ہوتے ہیں ۔ جب تک ہم منفی سوچ سے چھٹکارا حاصل نہیں کرتے اس وقت تک ہم کامیاب زندگی نہیں گزارسکتے ۔ منفی سوچ زندگی کے ہرموڑپرآپ کو نقصان پہنچاسکتا ہے اور جب آپ ذہنی دباو کا شکارہوجاتے ہیں تو خاندان اورسماج کے لیے بھی نقصان دہ ہوتے ہیں۔کئی خاندان محض منفی سوچ سے ٹوٹ پھوٹ جاتے ہیں ۔ اس حوالے سے یہاں کسی کی تحریرنقل کی جارہی ہے۔

’’ مثبت سوچ منفی سوچ!!!!
ﻣﺜﺒﺖ ﻭ ﻣﻨﻔﯽ ﻋﻤﻞ کیا هے ؟
” ﻣﺜﺒﺖ ” ﮐﺎ ﻣﻄﻠﺐ ﮨﮯ ﺟﻤﻊ ﮐﺮﻧﺎ، ﺍﺿﺎﻓﮧ ﮐﺮﻧﺎ ﯾﺎ ﺑﮍﮬﺎﻧﺎ ۔ ﺩﻭﺳﺮﯼ ﺟﺎﻧﺐ ” ﻣﻨﻔﯽ ” ﮐﺎ ﻣﻄﻠﺐ ﮐﻢ ﮐﺮﻧﺎ ﯾﺎﮔﮭﭩﺎﻧﺎ۔”
ﯾﮧ ﺍﯾﮏ ﺣﻘﯿﻘﺖ ﮨﮯ۔ﻣﺜﺒﺖ ﻋﻤﻞ ﺳﮯ ﻣﺮﺍﺩ ﮨﺮ ﻭﮦ ﮐﺎﻡ ﮨﮯ ﺟﺲ ﺳﮯ ﺗﺮﻗﯽ ﮨﻮ، ﺑﻠﻨﺪﯼ ﮐﯽ ﺟﺎﻧﺐ ﭘﯿﺶ ﻗﺪﻣﯽ ﮨﻮ،ﻣﻨﺰﻝ ﮐﺎ ﺣﺼﻮﻝ ﮨﻮ، ﺑﮩﺘﺮﯼ ﮨﻮ، ﻓﻼﺡ ﻭ ﺑﮩﺒﻮﺩ ﮨﻮ ،
ﺗﻌﻤﯿﺮ ﮨﻮ۔ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺑﺮﻋﮑﺲ ﻣﻨﻔﯽ ﻋﻤﻞ ﺳﮯ ﻣﺮﺍﺩ ﮨﺮﻭﮦ ﻓﻌﻞ ﮨﮯ ﺟﺲ ﻣﯿﮟ ﺣﻘﯿﻘﯽ ﻧﻘﺼﺎﻥ ﮨﻮ، ﺗﻨﺰﻟﯽ ﮨﻮ،ﻣﻨﺰﻝ ﺳﮯ ﺩﻭﺭﯼ ﮨﻮ، ﺗﺨﺮﯾﺐ ﮨﻮ۔ ﻣﺨﺘﺼﺮ ﺍﻟﻔﺎﻅ ﻣﯿﮟ
ﻣﺜﺒﺖ ﻋﻤﻞ ﻭﮦ ﮨﮯ ﺟﺲ ﮐﺎ ﻧﺘﯿﺠﮧ ﺗﻌﻤﯿﺮﯼ ﮨﻮ ﺍﻭﺭﻣﻨﻔﯽ ﮐﺎﻡ ﻭﮦ ﮨﮯ ﺟﺲ ﮐﺎ ﺍﻧﺠﺎﻡ ﺗﺨﺮﯾﺒﯽ ﮨﻮ۔ﺍﭼﮭﺎ ﮔﻤﺎﻥ ، ﻟﻮﮔﻮﮞ ﺳﮯ ﮨﻤﺪﺭﺩﯼ ﻭ ﻣﺤﺒﺖ، ﻣﺸﮑﻼﺕ ﻣﯿﮟ ﮈﭦ ﺟﺎﻧﺎ، ﻣﺼﯿﺒﺘﻮﮞ ﭘﺮ ﺻﺒﺮ، ﺻﺤﺖ ﮐﯽ ﺣﻔﺎﻇﺖ،ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﻮ ﻣﻌﺎﻑ ﮐﺮﻧﺎ، ﺳﭻ ﺑﻮﻟﻨﺎ، ﺳﺨﺎﻭﺕ، ﻭﻓﺎﺩﺍﺭﯼ،ﺍﺣﺴﺎﻥ ﺷﻨﺎﺳﯽ ﻭﻏﯿﺮﮦ ﻣﺜﺒﺖ ﺭﻭﯾﻮﮞ ﮐﯽ ﻣﺜﺎﻟﯿﮟ ﮨﯿﮟ۔ﺩﻭﺳﺮﯼ ﺟﺎﻧﺐ ﺑﺪﮔﻤﺎﻧﯽ، ﻧﻔﺮﺕ، ﺑﻼﺟﻮﺍﺯ ﺗﻨﻘﯿﺪ، ﻏﯿﺒﺖ،ﺑﻐﺾ ﻭ ﮐﯿﻨﮧ، ﭘﺴﺖ ﮨﻤﺘﯽ ﻭ ﻣﺎﯾﻮﺳﯽ،ﺑﮯ ﺻﺒﺮﯼ، ﻏﺼﮧ ﺳﮯ ﻣﻐﻠﻮﺏ ﮨﻮﺟﺎﻧﺎ، ﺑﺨﻞ ، ﺭﯾﺎﮐﺎﺭﯼ، ﺧﻮﺩﻏﺮﺿﯽ ﻭﻏﯿﺮﮦ ﻣﻨﻔﯽ ﺭﻭﯾﻮﮞ ﮐﯽ ﻣﺜﺎﻟﯿﮟ ﮨﯿﮟ۔
ﺍﻥ ﻭﺍﺿﺢ ﻣﺜﺎﻟﻮﮞ ﮐﮯ ﻋﻼﻭﮦ ﮐﭽﮫ ﻣﻌﺎﻣﻼﺕ ﺍﯾﺴﮯ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﺑﻈﺎﮨﺮ ﻭﮦ ﻣﺜﺒﺖ ﯾﺎ ﻣﻨﻔﯽ ﻣﺤﺴﻮﺱ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﻟﯿﮑﻦ ﻭﮦ ﺍﭘﻨﮯ ﺍﻧﺠﺎﻡ ﮐﮯ ﺍﻋﺘﺒﺎﺭ ﺳﮯ ﺑﺮﻋﮑﺲ ﮨﻮﺗﮯ
ﮨﯿﮟ۔ﻣﺜﺎﻝ ﮐﮯ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﺍﯾﮏ ﺷﺨﺺ ﺳﮕﺮﯾﭧ ﭘﯿﺘﺎ ﮨﮯ ﺟﺲ ﺳﮯ ﺍﺳﮯ ﻭﻗﺘﯽ ﻟﺬﺕ ﺍﻭﺭ ﺳﮑﻮﻥ ﻣﻠﺘﺎ ﮨﮯ ۔ ﻟﯿﮑﻦ ﯾﮧ ﻋﻤﻞ ﺍﭘﻨﮯ ﺍﻧﺠﺎﻡ ﮐﮯ ﺍﻋﺘﺒﺎﺭ ﺳﮯ ﻣﻨﻔﯽ ﮨﮯ ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ
ﺍﺱ ﮐﺎ ﻧﺘﯿﺠﮧ ﺻﺤﺖ ﮐﯽ ﺗﺒﺎﮨﯽ ﺍﻭﺭ ﺑﯿﻤﺎﺭﯼ ﮐﯽ ﺻﻮﺭﺕ ﻣﯿﮟ ﻧﮑﻠﺘﺎ ﮨﮯ۔ ﺍﺳﯽ ﻃﺮﺡ ﺍﯾﮏ ﻃﺎﻟﺐ ﻋﻠﻢ ﮨﮯ ﺟﻮﺭﺍﺕ ﮐﻮ ﺟﺎﮒ ﮐﺮ ﺍﻣﺘﺤﺎﻥ ﮐﯽ ﺗﯿﺎﺭﯼ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ ۔ ﺑﻈﺎﮨﺮ ﺗﻮ ﻧﯿﻨﺪ ﮐﺮ ﺑﺮﺑﺎﺩ ﮐﺮﻧﺎ ﺍﯾﮏ ﺗﺨﺮﯾﺒﯽ ﻋﻤﻞ ﮨﮯ ﻟﯿﮑﻦ ﯾﮧ ﺍﯾﮏ ﻣﺜﺒﺖ ﮐﺎﻡ ﮨﮯ ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺍﻧﺠﺎﻡ ﻣﺴﻘﺘﺒﻞ ﮐﯽ ﺑﮩﺘﺮﯼ ﮐﯽ ﺻﻮﺭﺕ ﻣﯿﮟ ﻧﮑﻠﺘﺎ ﮨﮯ۔ﻣﺜﺒﺖ ﺍﻭﺭ ﻣﻨﻔﯽ ﻋﻤﻞ ﮨﻤﺎﺭﯼ ﺳﻮﭺ ﭘﺮ ﻣﻨﺤﺼﺮ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ۔
ﺍﯾﮏ ﻣﻨﻔﯽ ﺳﻮﭺ ﮐﺎ ﺣﺎﻣﻞ ﺷﺨﺺ ﻣﻨﻔﯽ ﻋﻤﻞ ﮐﻮﺟﻨﻢ ﺩﯾﺘﺎ ﺟﺒﮑﮧ ﻣﺜﺒﺖ ﻓﮑﺮ ﮐﺎ ﺣﺎﻣﻞ ﺗﻌﻤﯿﺮﯼ ﻓﻌﻞ ﺍﻧﺠﺎﻡ ﺩﯾﺘﺎ ﮨﮯ۔ﻣﺜﺎﻝ ﮐﮯ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﺍﯾﮏ ﺷﺨﺺ ﺩﻭﺳﺮﻭﮞ ﮐﻮ ﺑﺮﺍ ﺳﻤﺠﮭﺘﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﺑﺪﮔﻤﺎﻧﯽ ﺍﻭﺭ ﻧﻔﺮﺕ ﺭﮐﮭﺘﺎ ﮨﮯ۔ﻣﻤﮑﻦ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻭﮦ ﺍﻥ ﻣﺨﺎﻟﻔﯿﻦ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﻣﻮﻗﻊ ﻣﻠﺘﮯ ﮨﯽ ﺍﻧﺘﻘﺎﻣﯽ ﮐﺎﺭﻭﺍﺋﯽ ﮐﺮ ﺑﯿﭩﮭﮯ ۔ ﺍﮔﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﻮ ﻭﮦ ﺧﻮﺩ ﮐﻮ ﺍﻧﺘﻘﺎﻡ ﮐﯽ ﺁﮒ ﻣﯿﮟ ﺟﻼ ﮐﺮ ﺍﺫﯾﺖ ﮨﯽ ﺩﯾﺘﺎ ﺭﮨﮯ ۔ ﺩﻭﺳﺮﯼ ﺟﺎﻧﺐ ﻣﺜﺒﺖ ﺳﻮﭺ ﮐﯽ ﻣﺜﺎﻝ ﮨﮯ ﺟﻮﻣﺜﺒﺖ ﻋﻤﻞ ﮐﻮ ﺟﻨﻢ ﺩﯾﺘﯽ ﮨﮯ۔ ﻓﺮﺽ ﮐﺮﯾﮟ ﮐﮧ ﺍﯾﮏ ﺷﺨﺺ ﮐﻮ ﯾﮧ ﯾﻘﯿﻦ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻭﮦ ﻣﻘﺎﺑﻠﮧ ﺟﯿﺖ ﻟﮯ ﮔﺎ۔ﭼﻨﺎﻧﭽﮧ ﻭﮦ ﻣﺤﻨﺖ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ ۔ ﻧﺘﯿﺠﮯ ﮐﮯ ﻃﻮﺭﭘرﮐﺎﻣﯿﺎﺑﯽ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻗﺪﻣﻮﮞ ﺗﻠﮯ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ۔ﻣﺜﺒﺖ ﻃﺮﺯ ﻓﮑﺮ ﻭﻋﻤﻞ ﮐﺎ ﺍﻧﺠﺎﻡ ﮐﺎﻣﯿﺎﺑﯽ ﺍﻭﺭ ﻣﻨﻔﯽ ﮐﺎ ﺍﻧﺠﺎﻡ ﻧﺎﮐﺎﻣﯽ ﮨﮯ ﺧﻮﺍﮦ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺗﻌﻠﻖ ﺩﻧﯿﺎ ﺳﮯ ﮨﻮ ﯾﺎ ﺁﺧﺮﺕ ﺳﮯ ﮨﻮ۔ ﺩﻧﯿﺎﻭﯼ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﻣﯿﮟ ﻣﺜﺒﺖ ﻃﺮﺯﺣﯿﺎﺕ ﺍﻋﻠﯽٰ ﺍﺧﻼﻗﯽ ﮐﺮﺩﺍﺭ ﮐﻮ ﺗﺨﻠﯿﻖ ﮐﺮﺗﺎ، ﻣﻨﺰﻝ ﺗﮏ ﺭﺳﺎﺋﯽ ﺁﺳﺎﻥ ﺑﻨﺎﺗﺎ، ﻣﺎﻝ ﻣﯿﮟ ﺑﺮﮐﺖ ﻻﺗﺎ، ﺍﻭﻻﺩ ﮐﻮ ﺻﺎﻟﺢ ﺑﻨﺎﺗﺎ،ﺷﺮﯾﮏ ﺣﯿﺎﺕ ﮐﻮ ﺍﻋﺘﻤﺎﺩ ﻭ ﺳﮑﻮﻥ ﺩﯾﺘﺎ، ﺩﻭﺳﺘﻮﮞ ﮐﻮﺧﻮﺵ ﺭﮐﮭﺘﺎ، ﻣﺎﮞ ﺑﺎﭖ ﮐﯽ ﺧﺪﻣﺖ ﮐﺮﻭﺍﺗﺎ ، ﺍﻋﻠﯽٰ ﺻﺤﺖ ﻭ ﻣﻌﯿﺎﺭ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﻓﺮﺍﮨﻢ ﮐﺮﺗﺎ ﺍﻭﺭ ﻣﺎﺩﯼ ﻓﻼﺡ ﻭﺑﮩﺒﻮﺩ ﮐﺎ ﺑﺎﻋﺚ ﺑﻨﺘﺎ ﮨﮯ۔ ﯾﮩﯽ ﺍﺛﺒﺎﺗﯽ ﺭﻭﯾﮧ ﺩﯾﻨﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﻣﯿﮟ ﺭﺏ ﺳﮯ ﺍﭼﮭﮯ ﮔﻤﺎﻥ ﺭﮐﮭﻮﺍﺗﺎ، ﺍﺱ ﭘﺮ ﺍﯾﻤﺎﻥ ﻣﻀﺒﻮﻁ ﮐﺮﺗﺎ، ﺍﺱ ﭘﺮ ﺑﮭﺮﻭﺳﮯ ﮐﮯ ﻟﺸﮑﺮ ﺗﯿﺎﺭ ﮐﺮﺗﺎ،ﺁﺧﺮﺕ ﮐﯽ ﺗﯿﺎﺭﯼ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺗﺎﺯﮦ ﺩﻡ ﮐﺮﺗﺎ ﺍﻭﺭ ﺑﺎﻵﺧﺮ ﺟﻨﺖ ﮐﯽ ﺑﺴﺘﯿﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﭨﮭﮑﺎﻧﮧ ﻣﯿﺴﺮ ﮐﺮﺩﯾﺘﺎ ﮨﮯ۔
ﺩﻭﺳﺮﯼ ﺟﺎﻧﺐ ﻣﻨﻔﯽ ﻃﺮﺯ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮨﮯ ۔ ﺩﻧﯿﺎ ﻣﯿﮟ ﯾﮧ ﻣﻨﻔﯿﺖ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﮐﻮ ﺫﮨﻨﯽ ﻣﺮﯾﺾ ﺑﻨﺎﺗﯽ، ﻣﺎﯾﻮﺳﯽ ﭘﯿﺪﺍ ﮐﺮﺗﯽ، ﺻﺤﺖ ﺑﺮﺑﺎﺩ ﮐﺮﺗﯽ ، ﺭﺯﻕ ﻣﯿﮟ ﺑﮯ ﺑﺮﮐﺘﯽ ﻻﺗﯽ،
ﺣﺴﺪ ﻭ ﺟﻠﻦ ﮐﮯ ﺍﻻﺅ ﺟﻼﺗﯽ، ﻧﻔﺮﺗﻮﮞ ﮐﮯ ﺟﻨﮕﻞ ﺍﮔﺎﺗﯽ، ﺑﮭﺎﺋﯽ ﮐﻮ ﺑﮭﺎﺋﯽ ﺳﮯ ﺟﺪﺍ ﮐﺮﺗﯽ ﺍﻭرﺭﺷﺘﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺗﻔﺮﯾﻖ ﮐﺮﺍﺗﯽ ﮨﮯ۔ ﺩﯾﻨﯽ ﺍﻣﻮﺭ ﻣﯿﮟ ﯾﮩﯽ ﻣﻨﻔﯽ ﻃﺮﺯﺣﯿﺎﺕ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﮯ ﺭﺏ ﺳﮯ ﺑﺪﮔﻤﺎﻥ ﮐﺮﺗﺎ، ﺍﺳﮯ ﺑﻐﺎﻭﺕ ﭘﺮﺍﮐﺴﺎﺗﺎ، ﺗﮑﺒﺮ ﮐﯽ ﺩﻋﻮﺕ ﺩﯾﺘﺎ، ﻋﺒﺎﺩﺕ ﺳﮯ ﺑﺮﮔﺸﺘﮧ ﮐﺮﺗﺎ ﺍﻭﺭﻣﺎﯾﻮﺳﯽ ﮐﯽ ﺑﻨﺎ ﭘﺮﮐﻔﺮﮐﯽ ﺟﺎﻧﺐ ﻟﮯ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔
ﻣﺜﺒﺖ ﻃﺮﺯ ﭘﯿﻐﻤﺒﺮﻭﮞ ﮐﯽ ﺳﻨﺖ ﺟﺒﮑﮧ ﻣﻨﻔﯽ ﻃﺮﺯﺷﯿﻄﺎﻥ ﮐﺎ ﻓﻌﻞ ﮨﮯ۔ ﻧﺒﯽ ﮐﺮﯾﻢ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭﺳﻠﻢ ﮐﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﻣﺜﺒﺖ ﻃﺮﺯ ﺣﯿﺎﺕ ﮐﯽ ﺑﮩﺘﺮﯾﻦ ﻣﺜﺎﻝ ﮨﮯ۔ ﺁﭖ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﺑﺪﺗﺮﯾﻦ ﻣﺨﺎﻟﻔﯿﻦ ﮐﮯ ﺑﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﺋﯽ ﻣﻨﻔﯽ ﺳﻮﭺ ﭘﯿﺪﺍ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﯽ، ﺍﻥ ﺳﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﺫﺍﺕ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺟﮭﮕﮍﺍﻧﮩﯿﮟ ﮐﯿﺎ ﺑﻠﮑﮧ ﺟﺐ ﻭﮦ ﺳﺐ ﻣﺨﺎﻟﻔﯿﻦ ﺷﮑﺴﺖ ﮐﮭﺎﮔﺌﮯ ﺗﻮ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﻣﻌﺎﻑ ﮐﺮﺩﯾﺎ۔ ﺁﭖ ﻧﮯ ۱۳ ﺳﺎﻟﮧ ﻣﮑﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﻣﯿﮟ ﺍﻧﺘﮩﺎﺋﯽ ﮐﭩﮭﻦ ﻭﻗﺖ ﮔﺬﺍﺭﺍ ﻟﯿﮑﻦ ﺁﭖ ﻧﮯ ﮐﺒﮭﯽ ﺍﭘﻨﮯ ﺭﺏ ﺳﮯ ﺷﮑﻮﮦ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﻧﮧ ﮨﯽ ﺍﻣﯿﺪ ﮐﺎ ﺩﺍﻣﻦ ﮨﺎﺗﮫ ﺳﮯ ﭼﮭﻮﮌﺍ ﯾﮩﺎﮞ ﺗﮏ ﮐﮧ ﮨﺠﺮﺕ ﮐﮯ ﻣﻮﻗﻊ ﭘﺮﻏﺎﺭﺣﺮﺍ ﮐﯽ ﺗﺎﺭﯾﮑﯿﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﺍﭘﻨﮯ ﺭﺏ ﭘﺮﻣﮑﻤﻞ ﺑﮭﺮﻭﺳﮧ ﺭﮐﮭﺎ۔ ﺗﺎﺭﯾﺦ ﮔﻮﺍﮦ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺧﺪﺍ ﮐﮯ ﭘﯿﻐﻤﺒﺮﺳﺮﺧﺮﻭﺭﮨﮯ ﺍﻭﺭﺷﯿﻄﺎﻥ ﻧﺎﮐﺎﻡ ﻭ ﻧﺎﻣﺮﺍﺩ ﮨﻮﺍ۔ ﺁﻧﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﺗﺎﺭﯾﺦ ﺑﮭﯽ ﮔﻮﺍﮦ ﺭﮨﮯ ﮔﯽ ﮐﮧ ﻣﺜﺒﺘﯿﺖ ﮐﺎﻣﯿﺎﺏ ﺍﻭﺭ ﻣﻨﻔﯿﺖ ﻧﺎﮐﺎﻡ ﺭﮨﮯ ﮔﯽ ﮐﮧ ﺧﻮﺍﮦ ﻭﮦ ﺩﻧﯿﺎ ﮨﻮ ﯾﺎ ﺁﺧﺮﺕ۔ماخوذ

اس ضمن میں ایک ویڈیو پیش خدمت ہے جو آپ کو اس بنیادی مرض سے چھٹکارا حاصل کرنے میں معاون ہوگا ۔

۲ thoughts on “منفی سوچ ‘ ذہنی دباؤکا سبب ۔ ۔ ۔”

Comments are closed.